Heart touching Urdu Ghazals

Heart touching Urdu Ghazals

Urdu poetry has become an important form of the culture of South Aisa. There are five major poets of Urdu whose names are Mirza Galib, Mir Taqi Mir, Allama Iqbal ,Josh Malihabadi and Mir Anees. Urdu poetry also includes Heart touching Urdu Ghazals.
In this Blog you will find many Heart touching Urdu Ghazals of Urdu poets . Also you can find sad urdu poetry and shayari and various quotes here.



 Ghazal may be understood as  a form of poetry in which there is expression of both love and pain. There are many Heart touching Urdu Ghazals in Urdu that have been written by many famous poets of Pakistan. Urdu poetry has many forms that includes Heart touching Urdu Ghazals and shayari. Ghazal lyrics, Ghazals singing and Qawali are also the form of Urdu poetry.
Heart Touching Urdu Ghazals


                     Urdu Heart touching Ghazals 


حسنِ مہ گرچہ بہ ہنگامِ کمال اچّھا ہے




حسنِ مہ گرچہ بہ ہنگامِ کمال اچّھا ہے
اس سے میرا مۂ خورشید جمال اچّھا ہے​

ان کے دیکھے سے جو آ جاتی ہے منہ پر رونق
وہ سمجھتے ہیں کہ بیمار کا حال اچّھا ہے​

دیکھیے پاتے ہیں عشّاق بتوں سے کیا فیض
اک برہمن نے کہا ہے کہ یہ سال اچّھا ہے​

ہم سخن تیشے نے فرہاد کو شیریں سے کیا
جس طرح کا کہ کسی میں ہو کمال اچّھا ہے​

قطرہ دریا میں جو مل جائے تو دریا ہو جائے
کام اچّھا ہے وہ جس کا کہ میٰل اچّھا ہے​

خضر سلطاں کو رکھے خالقِ اکبر سر سبز
شاہ کے باغ میں یہ تازہ نہال اچّھا ہے​

ہم کو معلوم ہے جنّت کی حقیقت لیکن
دل کے بہلانے کو غالب یہ خیال اچھا ہے

غالب


Husn e ma garcha ba hangam kamal acha hai

Is se mera ma Khurshid jamal acha hai 

un ke dekhe se jo aa jati hai mun par rounaq

woh samajte hain ke bemaar ka haal aaccha hai 

dekhieye paate hain ashaaq buton se kya Faiz

ik barhaman naay kaha hai ke yeh saal aaccha hai 


hum sukhan teeshy naay farhad ko sheree se kya


jis terhan ka ke kisi mein ho kamaal aaccha hai 


qatra darya mein jo mil jaye to darya ho jaye


kaam aaccha hai woh jis ka ke mil aaccha hai 


khizr sltan ko rakhay khalqِ akbar sir sabz


Shah ke baagh mein yeh taaza nihaal aaccha hai 

hum ko maloom hai jannat ki haqeeqat lekin

dil ke behlaane ko ghalib ye acha hai
                                             ----------



                     Urdu Heart touching Ghazals                

ہزاروں خواہشیں ایسی کہ ہر خواہش پہ دم نکلے


ہزاروں خواہشیں ایسی کہ ہر خواہش پہ دم نکلے
بہت نکلے مرے ارمان لیکن پھر بھی کم نکلے

ڈرے کیوں میرا قاتل کیا رہے گا اس کی گردن پر
وہ خوں جو چشم تر سے عمر بھر یوں دم بدم نکلے

نکلنا خلد سے آدم کا سنتے آئے ہیں لیکن
بہت بے آبرو ہو کر ترے کوچے سے ہم نکلے

بھرم کھل جائے ظالم تیرے قامت کی درازی کا
اگر اس طرۂ پر پیچ و خم کا پیچ و خم نکلے

مگر لکھوائے کوئی اس کو خط تو ہم سے لکھوائے
ہوئی صبح اور گھر سے کان پر رکھ کر قلم نکلے

ہوئی اس دور میں منسوب مجھ سے بادہ آشامی
پھر آیا وہ زمانہ جو جہاں میں جام جم نکلے

ہوئی جن سے توقع خستگی کی داد پانے کی
وہ ہم سے بھی زیادہ خستۂ تیغ ستم نکلے

محبت میں نہیں ہے فرق جینے اور مرنے کا
اسی کو دیکھ کر جیتے ہیں جس کافر پہ دم نکلے

کہاں مے خانہ کا دروازہ غالبؔ اور کہاں واعظ
پر اتنا جانتے ہیں کل وہ جاتا تھا کہ ہم نکلے
غالب
Hazaron khuwaishe aisi ke har khwahish pay dam niklay

Bohat niklay maray armaan lekin phir bhi kam niklay

Daray kyun mera qaatil kya rahay ga is ki gardan par

Woh khoo jo chasham tar se Umar bhar yun dam badam niklay

Niklana Khuld se aadam ka suntay aaye hain lekin

Bohat be aabaroo ho kar tre koochy se hum niklay

Bharam khil jaye zalim tairay qaamat ki Darazi ka

Agar is turah par paich o khham ka paich o khham niklay

Magar likhwaye koi is ko khat to hum se likhwaye

Hui subah aur ghar se kaan par rakh kar qalam niklay

Hui is daur mein mansoob mujh se baadah aashaami

Phir aaya woh zamana jo jahan
                                       -----------


                     Urdu Heart touching Ghazals 

لازم تھا کہ دیکھو مرا رستہ کوئی دِن اور

لازم تھا کہ دیکھو مرا رستہ کوئی دِن اور
تنہا گئے کیوں؟ اب رہو تنہا کوئی دن اور

مٹ جائےگا سَر ،گر، ترا پتھر نہ گھِسے گا
ہوں در پہ ترے ناصیہ فرسا کوئی دن اور

آئے ہو کل اور آج ہی کہتے ہو کہ ’جاؤں؟‘
مانا کہ ھمیشہ نہیں اچھا کوئی دن اور

جاتے ہوئے کہتے ہو ’قیامت کو ملیں گے‘
کیا خوب! قیامت کا ہے گویا کوئی دن اور

ہاں اے فلکِ پیر! جواں تھا ابھی عارف
کیا تیرا بگڑ تا جو نہ مرتا کوئی دن اور

تم ماہِ شبِ چار دہم تھے مرے گھر کے
پھر کیوں نہ رہا گھر کا وہ نقشا کوئی دن اور

تم کون سے ایسے تھے کھرے داد و ستد کے
کرتا ملکُ الموت تقاضا کوئی دن اور

مجھ سے تمہیں نفرت سہی، نیر سے لڑائی
بچوں کا بھی دیکھا نہ تماشا کوئی دن اور

گزری نہ بہرحال یہ مدت خوش و ناخوش
کرنا تھا جواں مرگ گزارا کوئی دن اور

ناداں ہو جو کہتے ہو کہ ’کیوں جیتے ہیں غالب‘
قسمت میں ہے مرنے کی تمنا کوئی دن اور

غالب
Lazim tha ke dekho mra rasta koi din aur



Tanha gaye kyun? ab raho tanha koi din aur





Mit jaye ga sar, gir, tra pathar nah ghse ga



Hon Dur pay tre Nassia farsaa koi din aur





Aye ho kal aur aaj hi kehte ho ke' jaoon? '



Maana ke hmish_h nahi achcha koi din aur





Jatay hue kehte ho' qayamat ko milein ge '



Kya khoob! qayamat ka hai goya koi din aur





Haan ae fallak paiir! jawaa tha abhi arif



Kya tera baggar taa jo nah Mirta koi din aur





Tum mahِ shab_e_ chaar daham they maray ghar ke



Phir kyun nah raha ghar ka woh naqsha koi din aur


-------------                                   

Post a Comment

0 Comments